skip to Main Content
صدقہ وخیرات

حضرت ابوہریرہؓ سے روایت ہے کہ آنحضرت ﷺنے فرمایا: ایک درھم لاکھ درھم سے بڑھ گیا۔لوگوں نے عرض کیا:یارسول اللہ ﷺکیونکر؟آپؐ نے فرمایا:ایک شخص کے پاس دودرھم تھے اس نے ایک درھم لے کرصدقہ دیااورایک شخص کے پاس بہت مال تھا اس نے اپنے مال کے ایک حصہ میں سے لاکھ درھم اٹھائے اورصدقہ دیا۔ (سنن نسائی)
حضرت ابن عباس بیان کرتے ہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس کچھ فقراء نے آ کر عرض کیا: اللہ کے رسول! مالدار لوگ  (بھی )  نماز پڑھتے ہیں جیسے ہم پڑھتے ہیں، وہ بھی روزے رکھتے ہیں جیسے ہم رکھتے ہیں، ان کے پاس مال ہے وہ صدقہ و خیرات کرتے ہیں، اور  (اللہ کی راہ میں) خرچ کرتے ہیں،  (اور ہم نہیں کر پاتے ہیں تو ہم ان کے برابر کیسے ہو سکتے ہیں ) یہ سن کر نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب تم لوگ نماز پڑھ چکو تو 33بار سبحان اللہ۔33بار الحمد لله۔ اور 34بار اللہ اکبر۔ اور 10بار لاإله إلا اللہ کہو، تو تم اس کے ذریعہ سے ان لوگوں کو پا لو گے جو تم سے سبقت کر گئے ہیں، اور اپنے بعد والوں سے سبقت کر جاؤ گے ۔

(سنن نسائی باب الدعاء)

image_printپرنٹ کریں